مرکزی صفحہ / زاہد حسن

زاہد حسن

زاہد حسن
لاہور میں مقیم زاہد حسن پنجابی اور اُردو کے معروف لکھاری ہیں۔ فکشن ان کا خاص میدان ہے۔ پنجابی میں ان کی کہانیاں اور ناول معروف ہیں۔ ان دنوں سماجی ترقی کے شعبے سے وابستہ ہیں۔ zahid_dchd@yahoo.com

حلقہء دانش؛ سر سیّد احمد خاں ادبی خدمات

زاہد حسن حلقہ دانش لمز کے زیرِ اہتمام اس بار موضوعِ گفتگو ’’سرسیّد احمد خاں؛ ادبی خدمات ‘‘ تھا۔ متعلقہ موضوع پر پروفیسر معین نظامی نے بھرپور گفتگو کی۔ انھوں نے نہ صرف یہ کہ ان کی ذاتی زندگی پر بات چیت کی بلکہ ان کی مسلمانانِ برصغیّر کے لیے …

Read More »

ذخیرۂ انتظار حسین: تعارف و رونمائی

زاہد حسن اگر یہ کہا جائے کہ پچھلے ہفتے لاہور میں ادبی سر گرمیاں اپنے عروج پر رہیں تو کچھ غلط نہیں ہو گا۔ ایک سے بڑھ کر ایک ادبی تقریب کا اہتمام رہا۔ جمعہ 6 اکتوبر کو ایک طرف حلقہء دانش کی جانب سے نام ور افسانہ نگار، ناول …

Read More »

’’پیلوں‘‘ اور ’’سرائیکی لغت‘‘

زاہد حسن پیلوں ماہرِ تعلیم ، دانشور اور نقاد ڈاکٹر انوار احمد کی زیرِ ادارت ’’پیلوں‘‘ کا نیا شمارہ شائع ہو گیا ہے۔ ’’پیلوں‘‘ کو یہ تخصیص حاصل ہے کہ اس کے انیس شمارے نہایت تواتر اور تسلسل کے ساتھ سامنے آئے ہیں۔ بعض اوقات یہ تواتر اور تسلسل بھی …

Read More »

یادِ منیر اور نثرِ منیر

زاہد حسن دو دن ہوئے سرگودھا سے ڈاکٹر سمیرا اعجاز کی ترتیب و تہذیب کی ہوئی کتاب ’’کلیات نثر‘‘ منیر نیازی ملی، ساتھ ہی ۲۰۰۶ء میں ستمبر، اکتوبر کی وہ شامیں بھی یاد آئیں جو لاہور کی سڑکوں منیر نیازی کے اپنے اور بعض احباب کے گھر گُزریں۔ انور سن …

Read More »

کسّیاں دا پانی، پروین ملک اور حلقہء دانش

زاہد حسن یہ اعزاز بھی حلقہء دانش گورمانی مرکزِ زبان و ادب کو ہی جاتا ہے کہ انگریزی اور اردو کے ساتھ قومی زبانوں کے لکھنے والوں کے ساتھ بھی وہاں تقریبات کا اہتمام بڑے تسلسل کے ساتھ کیا جاتا رہا ہے۔ ابھی ۱۵/ستمبر کو ’’سندھ کی تین بہترین آوازیں‘‘ …

Read More »

پنجابی زبان و ادب کا محسنِ اعظم: افضل احسن رندھاوا

زاہد حسن پیدائش: یکم ستمبر ۱۹۳۷ء، امرتسر وفات: ۱۹ ستمبر ۲۰۱۷ء، فیصل آباد افضل احسن رندھاوا، پنجابی زبان و ادب کا نمایاں ترین نام ہیں۔ وہ شاعر، ناول نگار، کہانی کار اور مترجم کی حیثیت سے جانے جاتے ہیں۔ وہ ۱۹۳۷ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے۔ تقسیم کے وقت وہ …

Read More »

حلقہء دانش اور سندھ کی تین بہترین آوازیں

زاہد حسن گرمانی مرکزِ زبان و ادب کے تحت ’’حلقہ دانش‘‘ کے مستقل عنوان کے تحت ہر سہ ماہی کے دوران دس سے بارہ اردو لیکچرز کی ایک سیریز کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ یہ سلسلہ ۲۰۰۸ء سے جاری ہے۔ اس لیکچر سیریز میں ہماری ثقافت اور مختلف ادبی روایات …

Read More »

ہمارے ادبی و تہذیبی ورثہ کے امانتدار؛ معین نظامی

زاہد حسن جھنگ کے البیلے اور نویلے شاعر شیر افضل جعفری نے سائیں جائے اللہ وسائے معین نظامی کی شادی دل آبادی پر لکھے سہرے میں ایک شعر یہ بھی لکھا۔ لیلیٰ ورگی شام نے اپنی کجلی میڈھی کھولی ہے سسّی جیسی مالن سے کہتا ہے وقت اری لا، سہرا …

Read More »

دو نابروں کی نابر کہانی

زاہد حسن سلیم سہیل کا شمار ایسے لکھنے والوں میں ہوتا ہے جو اپنی ہم عصر زندگی میں ادب، ادبی محفلوں اور ادیبوں سے اپنی اہمیت اپنے کام کے ذریعے منواتے ہیں، ایسے لوگوں کی ایک انفرادیت یہ بھی ہوتی ہے کہ اپنے اصولوں سے انحراف کرتے ہیں نہ ہی …

Read More »

ترجمہ نگاری: تہذیبوں کے درمیان فکری مکالمہ (پاکستانی زبانوں کے باہم تراجم)

زاہد حسن اس بات سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ قیامِ پاکستان کے ساتھ ہی پاکستانی زبانوں کے باہم تراجم کرنے اور انھیں فروغ دینے کی خاص ضرورت تھی تاکہ مختلف صوبوں میں رہنے والے ایک دوسرے کی زبان، تہذیب اور سماجی معاملات کو بہتر طور پر سمجھ سکتے۔ …

Read More »