مرکزی صفحہ / محمد خان داؤد (صفحہ 2)

محمد خان داؤد

محمد خان داؤد
کراچی میں مقیم محمد خان داؤد سندھی اور اُردو صحافت کا وسیع تجربہ رکھنے کے بعد اب بہ طور فری لانسر کام کرنے اور لکھنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ سندھ-بلوچستان کے مشترکہ مسائل اور درد پہ لکھنے کا یارا رکھتے ہیں۔ Email:dawood.darwesh@yahoo.com

انہیں چھوڑ دو، انہیں کوئی نہیں‌ جانتا!

محمد خان داؤد جاتے جمہوری دور میں بلوچستان کی جمہوری حکومت ایسے رہی ہے، جیسے کہ ایک میاں کی دو بیویاں ہوں، اور وہ میاں کچھ عرصہ ایک بیوی کے ساتھ رہے، اور کچھ عرصہ دوسری بیوی کے ساتھ! بیویاں دو پارٹیاں اور ان دوپارٹیاں کے دو افراد تھے، اور …

Read More »

کب صبح ہوگی، کب سویرا ہوگا؟!!

محمد خان داؤد پنجاب کے کسی صوفی شاعر نے دل کے لیے لکھا ہے کہ، دل کیہ کردا کچھ سمجھ نہ آوے رُکدیاں رُکدیاں تھڑ تھڑ دھڑکے تھڑ کدیاں رُک جاوے! دل کیا کرتا ہے،کچھ سمجھ نہیں آتا رُک رُک کے دھڑکنے لگتا ہے دھڑکتے دھڑکتے رُک جاتا ہے! پر …

Read More »

آؤ اک دعا تحریر کریں!

محمد خان داؤد پرانا سورج ڈوب رہا ہے بس اب ڈوب جائے گا ایسے جیسے کوئی ملاح بچہ ماں کے ساتھ کھیلتا ندی میں ڈوب جائے اور ماں ماتم کرتی رہ جائے! پرانا سورج پہاڑوں کے دامن میں دفن ہورہا ہے دفن ہو جائے گا ایسے جیسے نامعلوم لوگ، نامعلوم …

Read More »

شاہزیب کا ماں کے نام خط!!!

محمد خان داؤد پیاری امی جان! میں کوئی ادیب نہیں، نہ دانشور ہوں۔ میں تو گھر میں آئے اخبار تک نہیں پڑھتا تھا۔ ماں میں نے تو کبھی زندگی میں،، مرزا غالب کے خطوط ،،بھی نہیں پڑھے،اور نہ مولانا آزاد کی،،غُبارِ خاطر!،، ماں میں تو زندگی میں آپ کے دامن …

Read More »

ایک دن اِن کے نام کریں!!

محمد خان داؤد وہ کراچی کی جاتی سردی میں پریس کلب کی دیوار کے سائے میں اِس بینر تلے بیٹھے ہیں جس پر لکھا ہوا ہے: "مسنگ پرسنز کی باحفاظت واپسی کی راہ ہموار کی جائے!” اُس بینر پر ان لوگوں کی تصویریں بھی موجود ہیں جو گُم کر دیے …

Read More »

عابد میر صاحب سے مختصر ملاقاتیں

محمد خان داؤد عابد میر صاحب پاکستان کے ایک موقر روزنامے میں لکھتے رہیں ہیں۔ جیسا کہ ہمیں اخباروں کے سیاہی سے کالے کیے پنوں سے محبت رہی ہے۔ تو جو چھپتا ہے۔وہ دکھتا ہے۔ اور جو دکھتا ہے۔ لازمی نہیں کہ وہ بکتا بھی ہو ۔پر جو چھپتا ہے۔ …

Read More »

پہاڑوں پر برف گرتی ہے!

محمد خان داؤد یہ موسم شہروں میں تو ان لوگوں کے لیے عیاشی ہے لایا ہے جو صبح کو بلیک کافی پیتے ہیں اور رات کو گرم مئے۔ یہ موسم ان گھروں کے لیے بھی راحت ہے جہاں جتنے افراد ہوتے ہیں، اتنی فرمائیشیں! اور جتنے افراد اتنا بڑا مینیو، …

Read More »

پہاڑوں کے آنسوؤں کو دیکھو!

محمد خان داؤد لطیف نے یہ بات تو سسئی کے لیے لکھی تھی کہ، میں اک بات کہوں شاید کہ محبوب مان جائے مجھے کیوں پہاڑوں میں رول گیا ہے! میں پہاڑوں میں رُل رہی ہوں میں اُسے ڈھونڈ رہی ہوں اور پسینہ ہے کہ ایسے بہہ رہا ہے کہ …

Read More »

سیندک کی بیٹی، ماریہ کی محبت میں ایک دن

محمد خان داؤد پہاڑوں کی دھرتی اتنی بے بس اور اتنی سستی بکے گی اس کا تو کوئی تصور بھی نہیں کر سکتا۔ پر وہ پہاڑوں کی دھرتی اتنی سستی بک رہی ہے کہ جتنی سستی کراچی شہر میں وہ چائنا کی اشیا بکتی ہیں جن کی کوئی قیمت نہیں …

Read More »