مرکزی صفحہ / گورگین بلوچ

گورگین بلوچ

گورگین بلوچ
گورگین بلوچ کا تعلق آواران سے ہے۔ بلوچی ادب میں ایم اے کرنے کے بعد اب کوئٹہ کے لا کالج سے قانون کی تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔ gorgainbaloch2@gmail.com

شہید ڈاکٹر شفیع: ایک روشن چراغ معدوم ہوگیا

گورگین بلوچ تاک میں دشمن بھی تھے اور پشت پر احباب بھی تیر پہلا کس نے مارا یہ کہانی پھر سہی! مذہبِ انسانیت کا ایک ستون گرگیا. ایک مسیحا نے لباس خاک پہنا اور زنده آواز، زنده ہستی ہنستے ہنستے گم ہوگئی. جس کا استقبال ستاره مہتاب کے درمیان کیا …

Read More »

’’ہم کو بھی پڑھنا ہے صاب۔۔۔!‘‘

گورگین بلوچ جوسٹین گارڈر کا لکھا ہوا ناول "سوفی کی دنیا” میں صوفی نامی معصوم کردار گویا میرے بلوچستان کے ان معصوم بچے ہیں جو روز جھاڑیوں میں چھپ کر خود سے جستجو میں لگ جاتے ہیں کہ میں کون ہوں؟ کیوں پیدا ہوا ہوں؟ میرے پیدا ہونے کا مقصد …

Read More »

حال حوال — امید کی کرن

گورگین بلوچ کوئٹہ کی آب و ہوا ہو، جناح روڈ ک تاریخی مقامات، ہنہ اوڑک کی خوب صورتی ہو، چلتن کے بلند پہاڑ یا جبل نور کے پُرآسائش غار ہوں ان دل کش و دل فریب مناظر میں کون بدقسمت بخاری بک شاپ (گوشہ ادب)، میزان چوک یا فٹ پاتھوں …

Read More »

بی ایس او کو اتحاد کی ضرورت

گورگین بلوچ قومی جبر، علمی، سیاسی، معاشی، شعوری پسماندگی، شخصیت پرستی، ذہنی غلامی، قومی محکومی، جاگیردارنہ قبائلی نظام اور طبقاتی استحال، ظلم جبر کے سیاہ دور میں بلوچستان میں ایک روشن سورج طلوع ہوا جسے مختلف نام دے کر آخر بی ایس او "بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن ” کے نام پر …

Read More »

آواران کے انٹرنز

گورگین بلوچ بلوچستان کے ضلع آواران کا 24 ستمبر 2013 کا ہولناک دن ہر ایک کو یاد ہوگا جس نے ضلع آواران کو صفحہ ہستی سے مٹا دیا. جس میں آواران کے علاقے آواران ، مشکے، گیشگور اور کولواہ کے لاکھوں لوگ بے گھر ہوئے، ہزاروں زخمی، اور سیکڑوں کے …

Read More »

بلوچستان کینسر کی زد میں

گورگین بلوچ بلوچستان گزشتہ کئی دہائیوں سے اونچے اونچے سنگلاخ پہاڑوں کے دامن میں موت کی وادیو‎ں میں تیر رہا ہے، روز سورج اپنے طلوع ہونے کے ساتھ ساتھ خوش چہرے کے بجائے کئی زندہ انسانوں کی موت کا اعلان کر کے اپنے ساتھ پورے بلوچستان کو غم خوار کر …

Read More »