مرکزی صفحہ / بلاگ / پسنی کا علاقہ ببرشور، حیدرگوٹھ کی زبوں‌ حالی

پسنی کا علاقہ ببرشور، حیدرگوٹھ کی زبوں‌ حالی

ظریف بلوچ

پسنی مکران کا ایک ساحلی علاقہ ہے جو کہ حالیہ حلقہ بندی کے تحت کئی وارڈز پر مشتمل ہے اور موجودہ بلدیاتی سسٹم کے تحت اسے میونسپل کمیٹی کا درجہ دیا گیا ہے۔ جو کہ ماضی میں دو یونین کونسل شمالی اور جنوبی پر مشتمل تھا۔ شہر میں بلدیاتی نظام نفاذ ہے۔ جس کا مطلب عوام کے مسائل ان کی دہلیز پر حل کرنا ہے۔

شہر کا مغربی علاقہ ببرشور، حیدرگوٹھ گزشتہ کافی عرصے سے ترقیاتی منصوبوں سے محروم نظر آتا ہے اور ان علاقوں میں ترقیاتی منصوبے شروع کرنے کی زحمت تک نہیں کی گئی۔ موجودہ بلدیاتی حکومت نے اس علاقے کو مکمل نظر انداز کر دیا ہے۔ ببرشور کئی چھوٹے چھوٹے گوٹھوں پر مشتمل شہر کی ایک بڑی آبادی ہے اور یہاں پسنی کے ریموٹ ایریا سے نقل مکانی کر کے آنے والے خاندانوں کی تعداد روز بروز بڑھتی چلی جا رہی ہے جس کی وجہ سے علاقے کے بنیادی مسائل حل نہ ہونے کی وجہ سے یہ مسلسل بڑھتے چلے جا رہے ہیں۔

بڑھتی ہوئے آبادی کی پیشِ نظر علاقے کے مسائل بھی بڑھتے جا رہے ہیں مگر میونسپل کمیٹی پسنی کے منتخب نمائندے اس علاقے میں ترقیاتی منصوبے شروع کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتے۔ بلدیاتی حکومت کی میونسپل کمیٹی پسنی نے ماضی سے لے کر اب تک پسنی کے زیادہ تر علاقوں میں گلیوں اور لنک روڈ کی مرمت اور پختہ کرنے پر لاکھوں روپے اپنے من پسند ٹھیکداروں کے ذریعے خرچ کیے۔ لیکن ببرشور ٹو حیدرگوٹھ لنک روڑ کی مرمت اور پختگی اب بھی سوالیہ نشان بن چکی ہے۔

نیز حیدرگوٹھ کے بوائز پرائمری سکول کے خستہ حال کمروں، باؤنڈری جس کا آدھا حصہ گر چکا ہے اور طلبا کی بڑھتی ہوئی آبادی کے پیشِ نظر اضافی کمروں کی تعمیر پر فنڈز مختص نہ کرنا علاقے کے عوام کے ساتھ زیادتی کے مترادف ہے۔ ببرشور کا پرائمری گرلز سکول اب بھی عوام کی جانب سے عطیہ کیے گئے کمرے پر چل رہا ہے۔ علاقے میں بجلی کے خستہ حال کھمبوں اور تاروں کی مرمت بھی نہیں ہو رہی ہے جب کہ بڑھتی ہوئی آبادی کے پیشِ نظر بجلی کے نئے ٹرانسفارمر کی تنصیب کی بھی اشد ضرورت ہونے کے باوجود اس معاملے پہ کسی کے کانوں میں جوں تک نہیں رینگتی۔

حالاں کہ پسنی میں ایک قوم پرست سیاسی پارٹی بلدیاتی حکومت میں ہے۔ جو کہ صوبے کے ساحل اور وسائل کے تحفظ کی بات کرتی ہے۔ اور بلوچستان کی ترقی و خوش حالی کی ضمانت کا دعویٰ کرتی ہے۔ مگر افسوس اس بات پر ہے کہ پسنی کے سب سے بڑا علاقہ ببرشور اور حیدرگوٹھ کو ترقیاتی منصوبوں میں مسلسل نظر انداز کیا جا رہا ہے جو کہ عوام کے ساتھ ناانصافی ہے۔

بدقسمتی کی علامت ببرشور حیدرگوٹھ ترقیاتی منصوبوں میں نظر انداز ہونے کی وجہ سے علاقے کے مسائل بڑھتے چلے جا رہے ہیں۔ اس علاقے کو نظرانداز ہوتے دیکھ کر یہ لگتا ہے کہ شاید یہ پسنی کا حصہ ہی نہیں۔ کیوں کہ میونسپل کمیونٹی کی جانب سے لاکھوں کے ترقیاتی فنڈز میں اتنی بڑی آبادی کے لیے ہزاروں کا فنڈز کا اجرا بھی نہیں ہو پاتا ہے۔

Facebook Comments
(Visited 41 times, 1 visits today)

متعلق ظریف بلوچ

ظریف بلوچ
بلوچستان کا ساحلی علاقہ پسنی سے تعلق رکھنے والا ظریف بلوچ گوادر کے ان موضوعات پر لکھنا پسند کرتا ہے جن پر لکھا نہیں گیا ہے۔۔