مرکزی صفحہ / بلاگ / دوستوں کا دوست، ماما قادر حارث

دوستوں کا دوست، ماما قادر حارث

خادم لہڑی

قادر حارث کی وفات نے جہاں دل کو انتہائی رنجیدہ کردیا، وہیں دل میں بہت سی یادوں کا دیا بھی جلا یا۔ ریڈیو پروگرام "خلقی کچاری” میں کئی سالوں کا ساتھ ہو، یا ٹی وی کے پروگرام اور ڈرامے ہوں۔ ملنسار اور دوستوں کا دوست قادر حارث کے ساتھ گزرے لمحات ہمیشہ دل میں رہیں گے۔

مجھے ان کے ساتھ کیے گئے اس ناانصافی نے ہمیشہ رنج اور تکلیف میں مبتلا رکھا، جب ٹی وی فیسٹول کے سلسلے میں کوئٹہ، کراچی، پشاور اور لاہور ٹی وی سٹیشنز سے ایک ایک ڈرامہ پیش کیا گیا۔ جس کے بعد عوام سے رائے لی گئی کہ کون سا ڈرامہ سب سے بہتر تھا. کس رائٹر نے سب سے اچھا ڈرامہ تحریر کیا. کس فنکار نے سب سے بہتر پرفارمنس دکھائی. کس کیمرہ مین کا کیمرہ ورک خوب سے خوب تر تھا. کس سیٹ ڈیزائنر نے سب سے اچھا سیٹ ڈیزائن کیا تھا وغیرہ وغیرہ۔۔۔۔

کوئٹہ سٹیشن سے پیش کیا گیا ڈرامہ جسے محترمہ نورالھدیٰ شاہ نے تحریر کیا تھا. (ڈرامے کا نام اس وقت مجھے یاد نہیں آرہا، غالباََ ڈرامے کا نام "آدم زادے” تھا۔) اور اس میں قادر حارث نے مین کردار ادا کیا تھا۔ عوامی رائے کے مطابق سب سے بہتر ڈرامہ قرار پایا۔ اور قادر حارث کو بہترین پرفارمنس پر اولین ایوارڈ کا حق دار قرار دیا گیا۔

مجھے یاد ہے کہ شدید سردی میں ٹھنڈے پانی میں ریکارڈنگ کرنے کی وجہ سے قادر حارث بیمار بھی پڑگئے تھے۔ لیکن بدقسمتی سے پی ٹی وی کے صاحب اقتدار لوگوں نے اعلان کے باوجود ان کو وہ ایوارڈ نہیں دیا۔ اور اس ناانصافی کے خلاف قادر حارث نے پریس کانفرنس کرکے یہ کہا تھا. "سب لوگوں کو ان کے ایوارڈز دے دیئے گئے، لیکن مجھے ایوارڈ جیتنے کے باوجود اس لئے ایوارڈ نہیں دیا گیا کیونکہ میں ایک بلوچ ہوں۔”

بہرحال باتیں اور یادیں تو بہت سی ہیں۔ جن کے لیے صفحات کے صفحات درکار ہیں۔ لیکن یہاں اتنی گنجائش نہیں۔

اللہ پاک ماما قادر حارث کو جنت الفردوس میں جگہ عطا فرمائے، اور پسماندہ گان کو صبر و جمیل عطا فرمائے۔

Facebook Comments
(Visited 38 times, 1 visits today)

متعلق حال حوال

حال حوال
"حال حوال" بلوچستان سے متعلق خبروں، تبصروں اور تجزیوں پہ مبنی اولین آن لائن اردو جریدہ ہے۔