مرکزی صفحہ / علمی حال / تعلیمی وراثت کا بٹوارہ

تعلیمی وراثت کا بٹوارہ

عبدالمنان روغانوی

محکمہ تعلیم بلوچستان میں اعلٰی پوسٹوں پر فائز آفیسران جونیئر سینئر کے درمیان پوسٹوں کا بٹوارہ مسلہء بن گیا. سینئر ایجوکیشنل اسٹاف ایسوسی ایشن (سیسا) بلوچستان کے قائدین سر پکڑ کر بیٹھ گۓ. اعلی عدلیہ کے فیصلے کے باجود سینئر آفیسرز کو ڈپارٹمنٹ نے حقوق سے عاق کردیا ہے. سپریم کورٹ آف پاکستان کے ایک حکم نامے کے مطابق بڑے پوسٹوں پر سینیئرز کا حق ہے. کورٹ نے بلوچستان کے قبائلی روایت کے مطابق فیصلہ دیا کہ جونیئر سینیئرز کی قدر کریں. ان کو وہ پوزیشن دیں جہاں محسوس ہو کہ وہ اس پوزیشن کے اہل ہیں. مگر ڈپارٹمنٹ میں بھی خاندانی روایت پروان چڑھ چکی ہے کہ چھوٹے بڑوں سے اپنی خواہشات منواتے آرہے ہیں اور بڑے فخر سے اپنے سینیئر کی سیٹ پر براجمان ہوتے ہیں کہ ہم جونئیرز بھی آپ ہی سینئرز کے چھوٹے بھائی ہیں.

سیسا بلوچستان کو اپنے سینیر آفیسرز کی یہ بدحالی پر بہت ملال ہے کہ اس کے چھوٹے آفیسرز اس کی بات کیوں نہیں مانتے. بہت کوشش کی کہ جونیئرز کو سمجھ آجائے کہ یہ جگہ اس کی نہیں اس کے سینئرز کی ہے. دو سال مسلسل سیسا کو اتنا پریشان کیا گیا جتنا شاید کسی اور آرگنائزیشن کو نہیں‌ کیا گیا. سیسا کی مرکزی عہدیداران سیکریٹری سے سینئر کے آرڈر جاری کرواتے ہیں تو دو دن بعد یہ آرڈر منسوخ کیے جاتے ہیں. یہ کیسے ہوجاتا ہے اس کا اظہار یہاں پر مناسب نہیں. میں خود بھی اس بات کا قائل ہوں کہ مجھ میں بھی عیب ہیں.اس بار سیسا اس مسئلے کی تہہ تک جاکر اسے حل کرنے کی ٹھان لی. کیونکہ ہر جگہ سے ڈپارٹمنٹ کے کچھ لوگ, کچھ تنظیموں نے سینئر جونیئر کے نعرے بلند کیۓ.اور یہ ایک ایسا نعرہ تھا کہ ڈپارٹمنٹ کے ہر ملازم کو اس نے سوچنے پر مجبور کردیا کہ یہ مسلہء کیا ہے؟ اگر یہاں یہ کہوں بے جا نہ ہوگا کہ این ٹی ایس پوسٹوں پر کامیاب ہونے والے ٹیچر بھرتی ہونے بعد پہلے سینئر جونیئر مسئلے کو سمجھنے کی کوشش کریں گے. کیونکہ بلوچستان تمام اسکولوں میں آدھی چھٹی میں دو ہی مسلؤں پر کچاری ہوتی رہتی ہے ان میں ایک "سینئر جونیئر” دوسرا "ففٹی پرسنٹ پرموشن” سینئر جونیئر اس نعرے نے سیسا کے ٹکڑے ٹکڑے کردیۓ. جائیداد کا بٹوارہ کرنے والا خود ہی بٹ گیا اور نوزائیدہ تنظیم "سیسا حقیقی” وجود میں آیا.سیسا بلوچستان نے ڈائریکٹر اور سیکریٹری ایجوکیشن سے کئی بار ٹیبل ٹاک کیا کہ اس مسئلے کو حل کیا جائے. مگر سب بے سود. بالاآخر ہائ کورٹ بلوچستان میں دو فریقین سیکریٹریٹ اور سیسا کے مابین ایک پیٹیشن بعنوان "بٹوارہ اعلی پوسٹ” دائر کیا گیا. جس کے فیصلے کا خلاصہ کچھ یوں ہے.
"ڈپارٹمنٹ کو فی الفور یہ حکم دیا جاتا ہے کہ ڈپارٹمنٹل پرموشنز جلد از جلد بغیر کسی حیل و حجت مکمل کرکے سینئر بڑے آفسر کو اس جگہ بٹھاؤ جہاں اس کا اصل جگہ ہے”.

مانا کہ جونیئرز کے لۓ ناہضم ہونے والی بات ہے. مگر فکر نہ کریں جتنے بھی جونیئرز ہیں سب کلسٹر ہیڈ کی سطح پر لگ جائیں گے. مگر ان کے ساتھ یہاں ایک اور مسئلہ ہوگا. جونئیرز آپس میں لڑنا شروع کریں گے. وہ بولے میں بھی اس پوسٹ کے لۓ اہل ہوں کیوں نہ اس سیٹ پر بیٹھ جاؤں. وہی مسلہ پھر اٹھ کھڑا ہوگا.

سائیکالوجیکل نقطہء نظر سے اس وقت یہ بات نفسیاتی ثابت ہوجائے گا کہ مسئلہ ختم نہیں ہوا. بلکہ بڑی مسافت کے بعد اوپری سطح سے نچلی سطح پر آئی ہے. جہاں اس مسئلے کی حل کے لیے بہت تگ ودو کرنا پڑے گا.

Facebook Comments
(Visited 14 times, 1 visits today)

متعلق حال حوال

حال حوال
"حال حوال" بلوچستان سے متعلق خبروں، تبصروں اور تجزیوں پہ مبنی اولین آن لائن اردو جریدہ ہے۔