مرکزی صفحہ / مباحث / بلوچستان پبلک سروس کمیشن کے اہم انقلابی فیصلے

بلوچستان پبلک سروس کمیشن کے اہم انقلابی فیصلے

عبدالباری مندوخیل

سوشل میڈیا پر بی پی ایس سی کے افیشل پیج BPSC Jobs پر اخبار میں اشاعت سے قبل اسسٹنٹ کمشنر اور سیکشن افیسر کے 63 خالی اسامیوں کا اشتہار اتے ہی بلوچستان کے باصلاحیت طالبعلموں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔ اور فیس بک پر اسکی شیئرنگ ٹاپ ٹرینڈ رہی۔ اور ہر طالبعلم اسے ایک بہترین موقع سمجھ کر کسی بھی قیمت پر نہیں گنوانا چاہتا۔
بلوچستان پبلک سروس کمیشن کی حالیہ تاریخ میں گذشتہ دو سالوں میں مسلسل دوسری مرتبہ اتنی بڑی تعداد میں پوسٹیں مشتہر کی جارہی ہے۔
اسی طرح اس ادارے نے دو اہم انقلابی فیصلے کیے ہیں۔ وہ یہ کہ پہلی مرتبہ اے سی اور ایس او کی اپلائی کیلئے ان لائن نظام متعارف کرایا گیا ہے۔ ۔ جو کہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں رہنے والوں کیلیے کسی غنیمت سے کم نہیں۔ اب وہ فوٹو سٹیٹ کے دکانوں کی چکر لگانے اور ڈاکومنٹس پر اٹیسٹیشن کیے بغیر دو منٹ کی دوری پر اپلائی کیلیے انٹرنیٹ سے مستفید ہو سکیں گے۔ یہ سہولت یقیناً بلوچستان جیسے صوبے کیلیے بی پی ایس سی کی جانب سے انقلابی خدمت ہے۔
ان پوسٹوں کی دوسری اہم اور قابل تعریف بات انکی مارچ میں متوقع ایگزام کا انعقاد ہے۔ پچھلے پوسٹوں میں امتحان لینے کی تاخیر نے امیدواروں کو ذہنی کوفت میں میں مبتلا کیا تھا۔ اور وہ ایک چیز بار بار پڑھ کے تھک چکے تھے۔کیونکہ ایک تو اس ایگزام کے لینے کا فیصلہ تاخیر سے کیا گیا۔ اور جب انہوں نے فیصلہ کیا۔ تو سیاسی پارٹیوں اور عوامی حلقے مختلف دلائل سامنے لا کر اسکو مزید ڈیلے کرنے کے موجب بنے۔
اس دفعہ بی پی ایس سی نے نہایت ہی اچھا Decision لیا ہے۔ اور مارچ کا مہینہ کسی بھی حوالے سے موزوں ترین مہینہ ہے۔ کیونکہ اسمیں نہ اور کوئی بڑا ایگزام ہوتا ہے۔ نہ رمضان , عیدین اور نہ ہی حج کا مسئلہ ہوتا ہے۔
اگر مارچ اور اپریل کے مہینے میں خدا نخواستہ ایگزام کنڈکٹ نہیں کیے جاتے۔ تو مئی کے مہینے سے رمضان, عیدین اور حج کا سلسلہ شروع ہو کر یہ پچھلے پوسٹوں کیطرح تاخیری لوازمات بنیگے۔ اور غیر سنجیدہ لوگ اخباری بیانات اور احتجاج کا رستہ اختیار کرینگے۔ تاکہ اپنا وقت ضائع کرنے کیساتھ ساتھ دوسروں کا وقت بھی ضائع کریں۔

لہذا میں سمجھتا ہوں۔ کہ چیرمین بی پی ایس سی اور اسکی ٹیم اس بات کو بہتر سمجھتے ہیں۔ اسی لیے انہوں مارچ میں امتحان لینے کا ارادہ ظاہر کیا ہے۔

بلوچستان کے طلباء و طالبات کی عمومی طور پر بلوچستان پبلک سروس کمیشن کی پوری ٹیم اور خصوصاً چیرمین سے بڑی امیدیں وابسطہ ہیں۔ اور وہ ان امیدوں پر بڑی حد تک اترے ہیں ۔ کوہلی صاحب کی کارکردگی بحثیت چیئرمین بلاشبہ اپنی مثال اپ ہیں۔ جس نے اپنے Tenure میں میرٹ کو اولین ترجیح بناتے ہوئے بلوچستان کے پڑھنے والوں کیلیے امید کی ایک فضاء قائم کی ہے۔ اور اسی امید پر یہ توقع کرتے ہیں۔ کہ مارچ ہی میں ایگزام کا انعقاد یقینی بنایا جائیگا۔ اور ایگزام کا بروقت انعقاد کر کے بی پی ایس سی کا کامیابی اپنی جگہ طلباء بھی بے جا اور غیر ضروری انتظار اور تکلیف سے بچ جائینگے۔

Facebook Comments
(Visited 690 times, 1 visits today)

متعلق عبدالباری مندوخیل

عبدالباری مندوخیل
عبدالباری مندوخیل ایم اے جرنلزم ہیں۔ سماجی اور سیاسی علوم میں دلچسپی رکھتے اور لکھتے رہتے ہیں۔ bari_mandokhail@yahoo.com