مرکزی صفحہ / مباحث / جنگ اور محبت میں سب جائز نہیں ہوتا!

جنگ اور محبت میں سب جائز نہیں ہوتا!

اقبال خورشید

’’جنگ اور محبت میں سب جائز ہونے کا فلسفہ جھوٹ ہے، صرف جائز ہی جائز ہوتا ہے۔‘‘

یہ اُجلے الفاظ، جو ذہن کی کایا کلپ کر دیں، ایک قدیم اصول کا سحر توڑ ڈالیں، ڈاکٹر شاہ محمد مری کے ہیں۔ ایک طبیب کے، جو قلم اور نشتر، ہر دو سے بیماروں کو چنگا کرتا ہے۔ شاہ محمد مری میرے لیے بلوچستان کی سمت کھلنے والا دروازہ ہے۔ ورنہ میں بھی عرصے تک اِس زرخیز، قدیم تہذیبوں کے گہوارے سے بے خبر رہتا، گو مجھے آج بھی اس سے واقفیت کا دعویٰ نہیں۔ فقط مست توکلی اور گل خان نصیر نہیں، ہمیں تو شاہ عنایت اور سوبھو گیان چندانی سے بھی شاہ محمد مری نے متعارف کروایا۔ ساتھ ہاورڈفاسٹ کے لازوال ناول ’’اسپارٹکس‘‘ کا تحفہ دیا۔ عابدمیر سے ہمارے سمبندھ میں کچھ اثر شاہ محمد مری کا بھی ہے۔

تو شاہ محمد مری مجھ سمت ان سیکڑوں افراد کے لیے، جو بلوچستان کو اجنبی پاتے تھے، ایک دروازہ ہے، جس کے ذریعے ہم اس علاقے کو، وہاں کی تاریخ، مسائل، مطالبات کو کچھ حد تک سمجھ سکتے ہیں۔ وہاں کا قبائلی نظام اپنی جگہ، سرداروں کا اثر و رسوخ تلخ حقیقت، مگر یہ بھی سچ ہے کہ وہاں کے دانش وروں نے حق کا ساتھ دیا، اور قلم کاروں نے سچ کے لیے آواز اٹھائی۔ سوویت یونین کے زوال کے بعد پاکستان میں کمیونسٹ نظریات کمزور ہوئے، مگرقوم پرستی کے اشتراک سے اُن نظریات کو کچھ زندگی ملی،تو کچھ کردار اُس میں سندھی اور بلوچ دانش وروں کا بھی تھا۔المیہ یہ ہے کہ موجودہ بلوچستان میں علمی و ادبی طبقات غیرمتعلقہ ہوتے جارہے ہیں یا ہو چکے ہیں، مقابلہ ریاست اور ان کے درمیان ہے، جو پہاڑوں پر بیٹھے ہیں۔

گزشتہ دنوں تربت میں محنت کشوں کے قتل کا لرزہ خیز واقعہ پیش آیا۔ یہ اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ نہیں، ماضی میں بھی سیٹلرز کے قتل کے واقعات بلوچستان میں پیش آتے رہے ہیں۔ ہزارہ برادری کی ٹارگٹ کلنگ اور دہشت گرد حملوں میں کمی ضرور آئی ہے، مگر یہ سلسلہ تھما نہیں ہے۔گو ہم بلوچستان کے عسکری اور سیاسی اسٹیک ہولڈرز کے بہتری اور ترقی کے دعووں کو بے بنیاد نہیں ٹھہرا سکتے، مگر یہ بھی نہیں کہا جا سکتا کہ مطلوبہ ٹارگیٹ حاصل کر لیا گیا ہے۔ بلوچستان کا مسئلہ تاریخی پس منظر رکھتا ہے، یہ اندازوں سے زیادہ گہرا اور پُرپیچ ہے، اس سے نمٹنے کا مؤثر ترین ذریعہ مذاکرات ہیں۔ البتہ وہ قوتیں، جو پاکستان کے آئین کے خلاف ہیں ، اور ریاست سے برسرپیکار ہیں، وہ چاہے کراچی میں ہوں، پشاور میں یا کوئٹہ، ان کا قلع قمع کرنا ریاست کی ذمے داری ہے۔

ہاں، تربت واقعے کا معاملہ کچھ مختلف ہے۔ اِسے ایک خاص تناظر میں دیکھا اور پیش کیاگیا۔ پنجاب میں سخت عوامی ردِعمل آیا۔ پندرہ افراد کے قتل کے چند روز بعد یونس توکلی کی ہلاکت کے دعوے کو دیکھتے ہوئے یہ واضح نظر آ رہا ہے کہ مستقبل میں بلوچستان میں جاری آپریشن میں تیزی آئے گی۔ سول اور عسکری قیادت کی جانب سے اہم ملاقاتیں اور فیصلے متوقع ہیں۔

جنگ اور محبت میں سب جائز ہونے کا فلسفہ جھوٹ ہے۔ عام شہریوں اور بے گناہوں کے قتلِ عام کا کوئی جواز نہیں تراشا جا سکتا۔ اِسی ہولناک فعل کے باعث ٹی ٹی پی نے خیبرپختون خوامیں اپنی حمایت کھو دی تھی، اور عمران خان کو ان کے حق میں دیے جانے والے غیرضروری بیانات سے پیچھے ہٹنا پڑا۔ ڈاکٹر اللہ نذر کے بیوی بچوں کی رہائی کے چند روز بعد پیش آنے والا یہ ہول ناک واقعہ کیا بلوچستان کی سیاست میں ٹرننگ پوائنٹ ثابت ہوگا؟ اِس بابت کچھ کہنا یوں دشوار کہ وفاق کے لیے بلوچستان آج بھی ایک کم حیثیت، بے زار کن خطہ ہے، ٹھیک کراچی کی مانند۔ اور پھر وفاق کی اپنی کئی الجھنیں ہیں۔ اِس وقت دارالحکومت ایک دھرنے کا خمیازہ بھگت رہا ہے۔

کچھ برس قبل بھی ادھر ایک بڑا دھرنا ہوا تھا، تب تومعاملہ سیاسی تھا۔ اِس بار ایک مذہبی جماعت، سیاست کا چولا پہنے ، اپنے مطالبات منوانے سڑک پر بیٹھی تھی۔ راقم الحروف سمیت جن تجزیہ کاروں اور کالم نویسوں نے خان کو اُس وقت رعایت دی تھی، اُنھیں اب تسلیم کر لینا چاہیے کہ اُنھوں نے اپنے قلم کا وزن غلط پلڑے میں ڈالا تھا۔ خیر، یہ تو جملہ معترضہ تھا۔ اِس وقت اسلام آباد میں آپریشن جاری ہے، جس کا ردِعمل ہمیں لاہور اور کراچی میں بھی دکھائی دے رہا ہے۔ اس مسئلے کے حل میں تاخیر سے حکومت کے امیج کو خاصی ٹھیس پہنچی۔ خدشہ ہے، آپریشن اس میں اضافے کا سبب نہ بن جائے۔ یوں بھی گزشتہ چند ماہ میں حکومت کی انا اتنی بار مجروح ہو چکی ہے کہ اب اس ضمن میں کسی سخت گیر مؤقف کی کوئی گنجایش نہیں بچی تھی۔

اینٹ سے اینٹ بجانے کے بیان کے بعد آصف علی زرداری سے ملاقات ملتوی کرنے والے میاں صاحب آج ان سے غیرمشروط طور پر ہاتھ ملانے کو تیار ہیں، تو اس کی وجہ ہے۔ اُن کے لیے رائے عامہ ہم وار کرنے والے کالم نویس بھی بلاول بھٹو کو مشورہ دے چکے ہیں کہ جمہوریت کے لیے وہ میمو کیس میں میاں صاحب کے کالے کوٹ پہننے اور یوسف رضا گیلانی کو برطرف کروانے کے اقدامات کو معاف کر دیں۔ اچھا، اِس فہرست میں افتخار چوہدری کو بحالی کی’’ خطا ‘‘بھی شامل کر لیجیے۔

ہمارے نزدیک آج جس اعتماد، قوت اور اتھارٹی کے ساتھ عدلیہ میاں صاحب کے مقدمات میں فیصلے سنا رہی ہے، اُس کی ’’تعمیر و ترقی‘‘میں میاں صاحب نے بھی اپنا حصہ ڈالا تھا۔ سابق وزیر اعظیم کو نااہلی کے بعد پارٹی کے اندر اور باہر، دونوں محاذوں پر سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ شہباز شریف کو قیادت سونپنے کا مطالبہ زور پکڑتا جا رہا تھا۔ شاہد خاقان عباسی کو وزیر اعظم لگا کر اِس پُرقوت مطالبے سے جان چھڑائی گئی۔ مریم نواز کی شبیہ جانشین کے طور پر ابھرنے لگی۔ پارٹی پر گرفت رکھنے کے لیے نااہل شخص کے پارٹی سربراہ بننے کا بل بھی پاس کروا لیا۔

گزشتہ دنوں جب پارلیمنٹ میں اس کی مخالفت میں بل پیش ہوا، تو اکثریتی ووٹوں سے اُسے رد کروا کر بہ ظاہر اپنے مخالفین کو خاک چٹا دی، اور عاصمہ جہانگیر سمیت کئی روشن خیال طبقات سے داد سمیٹ لی، مگر ان اقدامات کی افادیت کا، پارٹی پر میاں نواز شریف کی گرفت اور پنجاب میں ان کی مقبولیت کا اصل کا اندازہ نگراں سیٹ اپ کے بعد ہی ہوگا۔ پنجاب کے ووٹرز کی اکثریت کے لیے اداروں سے تصادم کا تصویر کبھی دل پذیر نہیں رہا۔ پھرپارٹی میں توڑ پھوڑ کا تصور خیالی نہیں، حقیقی ہے۔

میاں صاحب نے نااہل شخص کے پارٹی سربراہ بننے پر پابندی کا بل تو مسترد کروا دیا، مگر فضل الرحمان، اعجاز الحق اور اچکزئی جیسے اتحادی اجلاس میں شریک نہیں ہوئے۔ ظفراللہ جمالی نے حق میں ووٹ دیا، اور 22 ارکان غیرحاضر رہے۔ ن لیگ کے چند ارکان ’’اشارے‘‘ کے منتظر ہیں، ڈوبتی کشتی سے اُن کا کودنا فطری ہے۔ یہ ق لیگ کی کشتی سے کود کر ہی ن لیگ میں آئے تھے۔ قیادت اپنے پاس رکھ کر، اپنی اولاد کو جانشین کے طور پر پیش کر کے اور نااہل شخص کے پارٹی سربراہ بننے کی سہولت پیدا کرکے جو فتوحات میاں صاحب نے حاصل کی ہیں،اگر وہ ایک بڑی شکست پر منتج ہوں، تو اس پر حیرت نہیں ہونی چاہیے۔

کیوں کہ جنگ اور محبت میں سب جائز ہونے کا فلسفہ جھوٹ ہے، صرف جائز ہی جائز ہوتا ہے!

Facebook Comments
(Visited 27 times, 1 visits today)

متعلق اقبال خورشید

اقبال خورشید
کراچی میں مقیم اقبال خورشید کل وقتی صحافی ہیں۔ فکشن سے بھی شغف رکھتے ہیں۔ روزنامہ ایکسپریس کے میگزین سیکشن سے منسلک ہیں۔ ایکسیرپیس ہی میں ہفتہ وار کالم بھی لکھتے ہیں۔